Aaj TV News

BR100 4,381 Decreased By ▼ -20 (-0.46%)
BR30 16,863 Decreased By ▼ -630 (-3.6%)
KSE100 43,233 Decreased By ▼ -1 (-0%)
KSE30 16,718 Increased By ▲ 20 (0.12%)
COVID-19 TOTAL DAILY
CASES 1,286,453 431
DEATHS 28,761 8
Sindh 476,494 Cases
Punjab 443,379 Cases
Balochistan 33,491 Cases
Islamabad 107,848 Cases
KP 180,254 Cases

اسلام آباد:سپریم کورٹ نے مضاربہ اسکینڈل کے ملزم سیف الرحمان کی 10لاکھ روپےمچلکوں کے عوض عبوری ضمانت منظور کرلی ،قائم مقام چیف جسٹس عمرعطاء بندیال نے ملزم کی گرفتار ی پر نیب حکام کی سخت سرزنش کرتے ہوئے ریمار کس دیئے کہ سپریم کورٹ کسینو نہیں کہ جہاں نیب ملازمین اس طرح حملہ آور ہوں، احاطہ عدالت کی توہین نہیں ہونے دیں گے،نیب شہریوں کو خوفزدہ کرکے ریکوری نہیں کرسکتا، نیب کو ریکوری کرنی ہےتو قانون کے مطابق کرے۔

سپریم کورٹ میں مضاربہ سکینڈل کے ملزم اور نجی کمپنی کے مالک سیف الرحمان نیازی کی عبوری ضمانت کی درخواست پر سماعت ہوئی۔

نیب کی جانب سے ملزم کو عدالت عظمیٰ میں پیش کیا گیا جبکہ پراسیکیوٹر جنرل نیب بھی عدالت میں پیش ہوئے۔

قائم مقام چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے استفسار کیا کہ کیا نیب اہلکار کسی اکھاڑے میں آئے ہوئے تھے؟،ایسی کیا ایمرجنسی تھی کہ نیب نے ملزم کواحاطہ عدالت سے ڈرامائی انداز میں گرفتار کیا؟، کیا نیب اہلکار کسی کسینو کے سامنے کھڑ ے باونسر ہیں؟ ، سپریم کورٹ کسینو نہیں کہ جہاں نیب ملازمین اس طرح حملہ آور ہوں۔

چیف جسٹس نے نیب حکام کی سخت سرزنش کرتے ہوئے کہا کہ عدالت کے وقار کا تحفظ کرنا ہے، احاطہ عدالت کی توہین نہیں ہونے دیں گے، سی سی ٹی وی سے نیب ملازمین کی شناخت کی جائے گی،قانون کی حکمرانی ضروری ہے، نیب نے ریکوری کرنی ہے تو قانون کے مطابق کرے، نیب شہریوں کو خوفزدہ کرکے ریکوری نہیں کرسکتا، قانون کی حکمرانی نیب کی ریکوری سے زیاد ہ اہم ہے۔

جسٹس منیب اختر نے ریکارکس دیئے کہ نیب اہلکاروں کخلاےف تھانہ سیکرٹریٹ میں مقدمہ درج کرادیتے ہیں،جس پر پراسیکیوٹر جنرل نیب کی جانب سے عدالت سے غیر مشروط معافی مانگی گئی۔

سپریم کورٹ نے مضاربہ سکینڈل کے ملزم اور نجی کمپنی کے مالک سیف الرحمان نیازی کی ضمانت منظور کرتے ہوئے ملز م کو احاطہ عدالت سے گرفتار کرنے والے قومی احتساب بیورو(نیب) کے اہلکاروں کی تفصیلات طلب کرلیں۔

عدالت عظمیٰ کی جانب سے سیف الرحمان کی عبوری ضمانت10لاکھ روپے کے مچلوں کے عوض منظور کی گئی۔

سپریم کورٹ نے آئندہ سماعت پر ڈی جی نیب راولپنڈی اور ڈی جی ایچ آر نیب کو طلب کرتے ہوئے گرفتاری کی سی سی ٹی وی ویڈیو بھی پیش کرنے کا حکم جاری کیا جبکہ عدالت نے نیب اور پولیس اہلکاروں کی ٹریننگ سے متعلق بھی جواب طلب کر لیا۔

بعدازاں عدالت ملزم کو گرفتار کرنے والے نیب اہلکاروں کو ایک ،ایک لاکھ کے مچلے جمع کرانے کا حکم جاری کرتے ہوئے کیس کی مزیدسماعت یکم ستمبر تک ملتوی کردی۔