Aaj.tv Logo

اسٹیٹ بینک نے شرح سود 1.5 فیصد بڑھا کر 13.75 فیصد کردی

اپ ڈیٹ 23 مئ 2022
<p>اپریل میں اسٹیٹ بینک  نے مانیٹری پالیسی کی شرح 12.25 فیصد مقرر کی تھی۔ فوٹو — فائل</p>

اپریل میں اسٹیٹ بینک نے مانیٹری پالیسی کی شرح 12.25 فیصد مقرر کی تھی۔ فوٹو — فائل

کراچی: اسٹیٹ بینک اَف پاکستان نے دو ماہ کیلئے مانیٹری پالیسی کا اعلان کردیا ہے۔

بینک دولت پاکستان کی جانب سے دو ماہ کے لئے مانیٹری پالیسی میں شرح سود ڈیرھ فیصد اضافہ کے بعد بنیادی شرح سود 13.75 فیصد ہوگئی ہے۔

مرکزی بینک نے اپنے بیان میں کہا کہ اس سال اپریل میں اسٹیٹ بینک نے مانیٹری پالیسی کی شرح 12.25 فیصد مقرر کی تھی۔

مانیٹری پالیسی کمیٹی (ایم پی سی) نے اپنے بیان میں کہا کہ بین الاقوامی اجناس کی قیمتوں اور عالمی مالیاتی حالات کے نقطہ نظر کے ارد گرد اہم غیر یقینی صورتحال کو ایک مضبوط اور فعال پالیسی ردعمل کی ضرورت ہے لہذا اس نے آج اپنے ہنگامی اجلاس میں پالیسی کی شرح کو 250 بیسس پوائنٹس تک بڑھانے کا فیصلہ کیا۔

ایم پی سی نے یہ بھی نوٹ کیا کہ اسٹیٹ بینک افراط زر اور کرنٹ اکاؤنٹ پر دباؤ کو کم کرنے کے لیے مزید اقدامات کرنے کے عمل میں ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ایم پی سی کی آخری میٹنگ کے بعد سے افراط زر کا نقطہ نظر بگڑ گیا ہے اور بیرونی استحکام کو خطرات بڑھ گئے ہیں۔

بیرونی طور پر مستقبل کی منڈیوں سے پتہ چلتا ہے کہ تیل سمیت عالمی اجناس کی قیمتیں زیادہ دیر تک بلند رہنے کا امکان ہے اور فیڈرل ریزرو کی جانب سے سود کی شرحوں میں پہلے کی توقع سے زیادہ تیزی سے اضافہ ہونے کا امکان ہے، جس سے عالمی مالیاتی حالات میں سختی کا امکان ہے۔

اس کے علاوہ ایس بی پی کے زرمبادلہ کے ذخائر میں قرضوں کی ادائیگیوں اور کان کنی کے منصوبے میں ثالثی کے فیصلے سے حکومتی ادائیگیوں کی وجہ سے کمی واقع ہوئی ہے۔