Aaj News

نظروں سے کھانے کا ذائقہ تبدیل کرنے والی نفسیاتی تکنیک

اگر آپ کو کچھ چیزیں ہی پسند ہیں تو یہ طریقہ آزما کر دیکھیں
شائع 03 دسمبر 2022 10:45pm
<p>تصویر: اسٹاک فوٹوز</p>

تصویر: اسٹاک فوٹوز

اگر آپ کے بچے کو کوئی خاص ڈش پسند نہیں تو آپ کھانے کے بجائے برتن تبدیل کر کے دیکھیں۔

ایک نئی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ برتن کا رنگ کھانے کے ذائقے کو متاثر کر سکتا ہے۔

اس تجربے میں 47 رضاکاروں کو خوراک چننے کے حوالے سے پوچھے گئے سوال نامے کے جوابات کی بنیاد پر دو گروپوں میں تقسیم کیا گیا۔

اس کے بعد انہیں کھانا سرخ، نیلے یا سفید پیالوں میں پیش کیا گیا۔

اگرچہ رنگ نے بنا نخرا کئے کچھ بھی کھانے والوں کے ذائقے میں کوئی فرق پیدا نہیں کیا، لیکن پسندیدہ اور چنے ہوئے کھانے کھانے والوں نے برتن کے رنگ کی بنیاد پر اپنے ذائقہ کے احساسات میں تبدیلی کی اطلاع دی۔

برطانیہ کی یونیورسٹی آف پورٹسماؤتھ سے تعلق رکھنے والے ماہر نفسیات لورینزو اسٹافورڈ کا کہنا ہے کہ ”یہ علم ان لوگوں کے لیے کارآمد ثابت ہو سکتا ہے جو کھانے کے ذخیرے کو بڑھانے کی کوشش کر رہے ہیں۔“

”مثال کے طور پر، اگر آپ ایک پسندہدہ کھانا کھانے والے کو مزید سبزیاں آزمانے کی ترغیب دینا چاہتے ہیں جو کڑوی ہوں، تو آپ انہیں ایسی پلیٹ یا پیالے میں پیش کرنے کی کوشش کر سکتے ہیں جو مٹھاس کو بڑھانے کے لیے جانے جاتے ہیں۔“

نمک اور سرکہ کے ذائقے والے آلو کے چپس کے نمونے تمام شرکاء کو مختلف رنگوں کے پیالوں سے کھانے کے لیے دیے گئے، رضاکاروں کو پھر ان کی خواہش، نمکیات اور ذائقے کی شدت کی بنیاد پر درجہ بندی کرنے کو کہا گیا۔

اگرچہ پیالے کے رنگ کا ذائقہ کی شدت پر کوئی اثر نہیں ہونا تھا، سرخ اور نیلے پیالوں میں نمکین کھانے سفید پیالوں کے مقابلے میں زیادہ نمکین سمجھے گئے، جبکہ سرخ پیالوں میں نمکین غذا دیگر پیالوں کے مقابلے میں کم نمکین سمجھی گئیں۔

ابتدائی مطالعات کے مطابق، محققین تجویز کرتے ہیں کہ وہ پیکیجنگ جس سے شرکاء عام طور پر واقف ہیں ان کے ذائقہ کی کلیات کو متاثر کر سکتے ہیں۔ نمکین چیزیں اکثر برطانیہ میں نیلے رنگ کی پیکیجنگ میں فروخت ہوتی ہیں۔

اسٹافورڈ کا کہنا ہے کہ ”محدود خوراک رکھنے سے غذائیت کی کمی کے ساتھ ساتھ صحت کے مسائل جیسے دل کی بیماری، ہڈیوں کی خراب صحت اور دانتوں کے مسائل پیدا ہو سکتے ہیں۔“

”اس کی ایک سماجی قیمت بھی ہے، کیونکہ عام طور پر خاندان کے افراد کے درمیان خوشگوار لمحات آسانی سے تناؤ، پریشانی اور تنازعہ پیدا کرنے والے حالات میں تبدیل ہو سکتے ہیں، جب مرغوب غذائیں کھانے والے شرم محسوس کریں یا ان پر کھانا کھانے پر دباؤ ڈالا جائے۔“

ماضی کی تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ کسی بھی عمر کے مرغوب غذائیں کھانے والے خود کو 20 خورانی اشیاء تک محدود رکھ سکتے ہیں جو ایک وسیع خوراک کے ہوتے ہوئے مجموعی صحت کے لیے بہت برا ہے، اس کے منفی نتائج ہو سکتے ہیں۔

شروع میں یہ عجیب لگ سکتا ہے کہ برتن کا رنگ کھانے کے ذائقے کو متاثر کر سکتا ہے، لیکن پچھلی تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ روشنی اور موسیقی کھانے کے رویوں کو کس طرح متاثر کر سکتی ہے۔ ہمارے تمام حواس جڑے ہوئے ہیں، بشمول ذائقہ۔

Psychology

Food taste

picky eaters

color of crockery

Comments are closed on this story.

مقبول ترین